Abdullah ibn Masud & Tafdeel of Caliph Ali – Shia Allegation Answered

Did Abdullah ibn Masud ever say that Ali was the most virtues of the companions and Afdal than Abu Bakr and Umar? RadiAllahu Anhum wa alaihumussalam.

مذکورہ اثر میں لفظ ”افضل“ راوی کی خطا ہے جبکہ صحیح لفظ ”اقضی“ یعنی قاضی ہے۔
This is wrong because the word Afdal in this narration is a mistake from narrator which means ibn masud never said this.
امام ابن عبد البر رحمہ الله اس اثر پر تبصرہ کرتے ہوئے فرماتے ہیں کہ:
Lets see what ibn abdull barr said regarding this Athar.
رَوَى شُعْبَةُ عَنْ أَبَى إِسْحَاقَ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ يَزِيدَ عَنْ عَلْقَمَةَ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ قَالَ كُنَّا نَتَحَدَّثُ أَنَّ أَفْضَلَ أَهْلِ الْمُدِينَةِ عَلِيُّ بْنُ أَبِي طَالِبٍ۔وَهَذَا عِنْدِي حيث فِيهِ تَصْحِيفٌ مِمَّنْ رَوَاهُ عَنْ شُعْبَةَ هَكَذَا۔وإنما المحفوظ فيه عن بن مَسْعُودٍ أَنَّهُ قَالَ كُنَّا نَتَحَدَّثُ أَنَّ أَمْضَى أَهْلِ الْمَدِينَةِ عَلِيُّ بْنُ أَبِي طَالِبٍ هَكَذَا مِنَ الْقَضَاءِ لَا مِنَ الْفَضْلِ۔

(الاستذكار، ج: 14، ص: 242)

ترجمہ:

اور میرے نزدیک اس حدیث میں تصحیف ہے۔ شعبہ سے اس حدیث کو روایت کرنے والوں میں سے جس شخص نے اس حدیث کو اس طرح :”كُنَّا نَتَحَدَّثُ أَنَّ أَفْضَلَ أَهْلِ الْمُدِينَةِ عَلِيُّ بْنُ أَبِي طَالِبٍ“ روایت کیا ہے اس سے تصحیف ہوئی ہے۔(یعنی اس نے غلطی سے اقضی کی جگہ افضل روایت کیا ہے) اور جو اس حدیث میں حضرت عبدالله بن مسعود رضی الله عنہ سے محفوظ ہے وہ صرف یہ ہے کہ بیشک آپ رضی الله عنہ نے فرمایا:
I believe that theres a mistake in this mistake . Someone from those who have narrated this from Sho’ba mistakenly narrated this with rhe wording of Afdal instead of Aqda and whats proven and preserved from ibn masud is:
”كُنَّا نَتَحَدَّثُ أَنَّ أَمْضَى أَهْلِ الْمَدِينَةِ عَلِيُّ بْنُ أَبِي طَالِبٍ“

ہم یہ بات کہتے تھے کہ اہل مدینہ کے سب سے بڑے قاضی حضرت علی ابن ابی طالب رضی الله عنہ ہیں۔
We used to say that Ali was the greatest Qadi(jurist?) from ahle madina.
اس طرح (یہ لفظ اقضی ہے جو) قضاء سے مشتق ہے نہ کہ (افضل) جو فضل سے مشتق ہے۔
So its not Afdal but Aqda from Qada(root word)
درج ذیل محدثین نے مذکورہ اثر کو امام شعبہ رحمہ الله کے شاگردوں سے ”اقضی“ کے لفظ کے ساتھ روایت کیا ہے:
These below mentioned muhadditheen have narrated this narrarion with the eordinf of Aqda from Sh’oba
(1) امام بغوی رحمہ الله نے مذکورہ اثر کو ”عن أبوقطن عن شعبة“ کے طریق سے ”اقضی“ کے لفظ کے ساتھ روایت کیا:
From the route of an abu qatan an shoba imam baghwi narrated it with aqda wording.
حدثني جدي نا أبو قطن نا شعبة عن أبي إسحاق عن عبد الرحمن بن يزيد عن علقمة عن عبد الله قال: كنا نتحدث أن أقضى أهل المدينة علي بن أبي طالب.

(معجم الصحابة، ج: 4، ص: 361)

(2) امام ابن سعد رحمہ الله نے بھی مذکورہ اثر کو ”عن أبوقطن عن شعبة“ کے طریق سے ”اقضی“ کے لفظ کے ساتھ روایت کیا:
Imam ibn saad did the same and narrated from same route from shoba.
أَخْبَرَنَا وَهْبُ بْنُ جَرِيرِ بْنِ حَازِمٍ وَعُمَرُ بْنُ الْهَيْثَمِ أَبُو قَطَنٍ قَالا: أَخْبَرَنَا شُعْبَةُ عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ يَزِيدَ عَنْ عَلْقَمَةَ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ قَالَ: كُنَّا نَتَحَدَّثُ أَنَّ مِنْ أقضى أهل المدينة ابن أَبِي طَالِبٍ.

(الطبقات الكبير، ج: 2، ص: 292)

(3) امام حاکم رحمہ الله نے مذکورہ اثر کو ”عن آدم بن أبي الياس عن شعبة“ کے طریق سے ”اقضی“ کے لفظ کے ساتھ روایت کیا:
Imam hakim narrated this from an adam bin abi ilyas an shoba with aqda wording.
أَخْبَرَنِي عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ الْحَسَنِ الْقَاضِي، بِهَمْدَانَ، ثنا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحُسَيْنِ، ثنا آدَمُ بْنُ أَبِي إِيَاسٍ، ثنا شُعْبَةُ، عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ يَزِيدَ، عَنْ عَلْقَمَةَ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ قَالَ: كُنَّا نَتَحَدَّثُ أَنْ أَقْضَى أَهْلِ الْمَدِينَةِ عَلِيُّ بْنُ أَبِي طَالِبٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ.

(المستدرك على الصحيحين، ج: 3، ص: 145، برقم: 4656)

(4) امام ابن عبد البر رحمہ الله نے مذکورہ اثر کو ”عن مسلم بن ابراهیم عن شعبة“ کے طریق سے ”اقضی“ کے لفظ کے ساتھ روایت کیا:
Imam ibn abdul barr narrated this from an muslim bin ibrahim an shoba with aqda wording.
وَحَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَارِثِ، قَالَ: حدثنا قاسم، حدثنا أحمد بن زهير، حدثنا مُسْلِمُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ. حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ يَزِيدَ، عَنْ عَلْقَمَةَ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ، قَالَ: كُنَّا نَتَحَدَّثُ أن أقضى أهل المدينة علي بن أبي طَالِبٍ.

(الاستيعاب في معرفة الأصحاب، ج: 3، ص: 1103)

مزید یہ کہ امام ابن عبدالبر رحمہ الله نے اسی اثر کو سیدنا عبدالله بن مسعود رضی الله عنہ کے ایک اور شاگرد ابی میسرہ رحمہ الله سے بھی ”اقضی“ کے لفظ کے ساتھ روایت کیا ہے:
+ Imam ibn abdul barr has also narrated this from another companion of ibn masud named Ibn Abi maysara with the same wording of Aqda NOT AFDAL.
وَقَالَ الْحَسَنُ الْحُلْوَانِيُّ: حَدَّثَنَا وَهْبُ بْنُ جَرِيرٍ، عَنْ شُعْبَةَ، عن حبيب ابن الشَّهِيدِ، عَنْ ابْنِ أَبِي مُلَيْكَةَ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، عَنْ عُمَرَ أَنَّهُ قَالَ: أَقْضَانَا عَلِيٌّ، وَأَقْرَؤُنَا أُبَيٌّ. وَحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ آدَمَ، قَالَ: حدثنا ابن أبى زائدة، عن أبيه،عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ، عَنْ أَبِي مَيْسَرَةَ، قَالَ: قَالَ ابْنُ مَسْعُودٍ: إِنَّ أَقْضَى أَهْلِ الْمَدِينَةِ عَلِيُّ بْنُ أَبِي طَالِبٍ.

(الاستيعاب في معرفة الأصحاب، ج: 3، ص: 1104-1105)

لہذا صحیح اور محفوظ لفظ ”اقضی“ ہے۔ اس سے صرف اتنی بات ثابت ہوتی ہے کہ سیدنا عبدالله بن مسعود رضی الله عنہ سیدنا مولا علی رضی الله عنہ کو اہل مدینہ میں سب سے بڑا قاضی مانتے تھے۔ اس اثر سے قطعاً شیخین کی افضلیت کی نفی نہیں ہوتی۔ خیر۔ حید علی صاحب کا اس اثر سے استدلال باطل و مردود ہے۔
All of this research simply proves that the real and preserved word is Aqda and NOT AFDAL from fadal(root word). It proves rhat abdullah ibn masud didnt call ali the most virtues/Afdal of ahle madina but greatest qadi from ahle madina. One thing to note is that this athar doesnt prove Tafdeel of Ali over the Shaikhen. This athar can not be taken as a proof to prove that Ali was Afdal than the shaikhen.
والله ورسوله اعلم بصواب۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *